جعلی پیروں اور عاملوں کی حقیقت

آجکل مُختلف اخبارون اور رسائل مین اور بلخصوس سنڈر میگزین میں بہت عا ملوں، پیروں، اور
جادوگروںکے بڑے بڑے سائزکے اشتہار آویزاں ہوتے ھیں۔۔۔۔۔
محبوب آپکے قدموں میں،امتحان میں کامیابی،شوہر کی بیوفائی،ھر پریشانی اور مشکلات کا حل،جادو ٹونا،لاٹری کا نمبر،پسند کی شادی اور جانے کیا کیا کام موئکلوں اور جنات کے زریعے سع کروانے کے دعوے کرتے ہیں۔۔لیکن ان سب کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں۔۔۔اگر ایسا ممکن ھعے تو میں اُن عاملین کو مُنہ مانگی رقم دینے کو تیار ہوں ،،،،،اگر وہ اپنے عملیات یا مُکلوں کے زریعے میرے مُلک سے خود کش دھماکے،ٹارگٹ کلنگ،کرپشن ظلمُ نا انصافی اورفرقہ واریت کو ختم کروادیں۔۔۔۔لیکن ایسا ممکن نہیں،،،
کیونکہ اُن کے تمام دعوے جھوٹے ھیں۔۔۔وہ صرف بھولے بھالےاور کمزور عقیدہ لوگوں کو پھانستے ہیں۔۔۔اور ایسے لوگ با آسانی آنکے دام میں آجاتے ہیں،،،ایک بر ایک دوست کے سا تھ اک عامل کے پاس جانے کا اتفاق ھوا ۔میرا دوست عاملوں اور جعلی پیروں پر بہت عتقاد رکھتا تھا۔۔۔آسے وہم تھا کہ اُس کع گھر میں جنات نے ڈیرہ ڈال رکھا ہے۔۔۔خیر ہم ایک مشہور عامل کے پاس گئے۔۔۔وہ عمل یا پیر جو بھی سمجھ لیں بہھت عجیب سے حلیے میں تھا۔۔۔میرا دوست چونکہ پہلے بھی اُسکے پاس جاتا رہتا تھا۔اسلیے اُس عامل نے سب سے پہلے ھمیں اپنے پاس بلوا لیا۔۔۔۔میرے دوست نے اپنی پریشانی اسے بتادی ۔۔پھیر عامل نے ایک بوتل میں پانی ڈالا اور بڑبرانے کے انداز میں کوئی منتر پڑھنے لگا اور پھرایک لمبی سی پھونک بوتل پر مار کر بوتل میرے دوست کو دے دی۔اور کہنے لگا اس پانی کو اپنے گھر کے چاروں کونے میں چھڑکنااگر دھواں اُٹھے تو سمجھنا کے جنات اور بھوت بھاگ گئے۔۔۔مین بہت حیران ھوا۔۔۔میرے دوست نے اُسکو ھدیہ دیا اور پھر ھم واپس گھر آگئے۔گھر واپس آکرمیرے دوست نے گھر کے چاروں کونوں میں عامل کا دیا ھوا پانی چھڑکنا شروع کیا۔۔۔مین حیران رہ گیا جہاں پانی گرتا یکدم دھواں اُٹھتا؛؛؛میں بہت حیران ھوا ۔مگر میں بھی ھار ماننے والا نہیں تھا؛
میں نے اپنے دوست سے بہانھ کرکے اک چھوٹی سی شیشی میں پانی لےلیا۔اگلے دن میں اُس پانی کو ایک لیبارٹری میں لے گیا اور پانی کا ٹیسٹ کروایا ۔۔۔۔مُجھے ایک جھٹکا لگا۔۔۔۔پانی میں اک کیمیکل تھا۔۔۔جو پانی میں حل ھوکر ایسڈ کے اثرات پیدہ کر دیتا ھے اور جب وہ پانی زمین پر گرتا ہے تو دھواں اُٹھتا ھے۔۔میں نے یہ بات اپنے دوست کو بتائی تو وہ اُس نے یقین نہی کیا اُور اُلٹا مجھے ھی بُرا بھلا کھنا شروع کردیا۔۔۔
تھوڑے دن بعد میں اک بہانہ بنا کر اپنے دوست کے ساتھ پھر اُس عا مل کے پاس چلاگیا۔۔۔میں پوری تیاری کے ساتھ آیا تھا ؛مین نے عامل سے کہا باباجی ۔۔سنا ہے آپکے پاس موئکل بھی ہیں ۔۔۔بابا تھوڑا مُسکرایا اور بولا۔۔ھاں بچے ھیں موئکل میرے پس۔۔۔میں نے بابا کو کہا۔ میرا اک چھوٹا سا کام کر دو آپکو مُنہ مانگی رقم دوں گا
بابا بولا بتا کیا کام ہے ۔۔میں نے کہا باباا میرا موبائل رستے مے کہیں گم ھوگیا اپنے موئکلوں سے کہیں میرا موبائل تو تلاش کر کے لادیں۔۔بابا نے کہا بچہ اس کے لیےعمل کرنہ پڑے گا پھر موئکل حاضر ھونگے۔۔۔۔میں نے کہا ۔ٹھیک ہے بابا آپ عمل کرلیں میں کچھ دیر انتظار کر لیتا ھوں ۔۔۔بابا بولا عمل زرہ لمبا ہے اس میں 3 دن لگیں گے۔۔۔میں نے بابا کی آنکھوں میں دیکھتے ہوئے کہا ؛؛؛؛بابا جی نہ تمہارے پاس موئکل ھیں اُور نا تم کوئی پیر فقیر ھو تم نے ڈونگ رچا رکھا ھے ۔۔۔۔اور جو تم جنات کو بھگانے کا پانی دیتے ھو نہ آس میں کونسہ کیمیکل ملاتے ھو اُس کا بھی مجھے پتا ھے۔۔۔میری بات سن کر بابا طیش میں آگیا اور مجھے بُرا بھلا کہنے لگا۔۔۔۔۔پھر میں نے وھاں موجود تمام آدمیوں کو اُس کیمیکل کا نام بتایا اُور کہا تم گھر جاکر اس کیمیکل کو آزمانا تمکو ساری بات سمجھ آ جاے گی۔۔۔۔وہ ڈھونگی بابا مجھے دھمکی دینے لگا ۔۔۔میں نے کہا جوکرنا ہے کر لینا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ میرا زاتی تجربہ ھے ان جعلی عملوں کے بارے میں ۔۔۔۔۔ابھی اور بھی اصلیت ان کی آپکو بتانی ھے مگر اگلے حصے میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپکو یہ تحریر کیسی لگی اپنی آرا اُور تجاویز سے لازمی آگاہ کیجے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شکیل الرحمان رائو

Advertisements

Posted on April 12, 2015, in Uncategorized. Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: